172

صدر بائیڈن اور ٹرمپ کا پرائمری مقابلوں کا سلسلہ جاری

ان ریاستوں میں کامیابی سے دونوں سیاست دانوں نے اپنی اپنی جماعت کی جانب سے صدارتی نامزدگی کے لیے مزید مندوبین کی حمایت حاصل کر لی ہے۔
دونوں نے الینوائے، اوہائیو اور کنساس میں ہونے والے ڈیمو کریٹ اور ری پبلکن پرائمری انتخابات میں باآسانی کامیابی حاصل کر لی۔
صدر بائیڈن ڈیمو کریٹک پارٹی کی جانب سے صدارتی نامزدگی کے لیے درکار 1968 ڈیلیگٹس کی حمایت پہلے ہی حاصل کر چکے ہیں۔ سابق صدر ٹرمپ بھی ری پبلکن نامزدگی کے لیے درکار 1215 مندوبین کی حمایت حاصل کر چکے ہیں۔
تازہ ترین اطلاعات کے مطابق ایریزونا کے پرائمری انتخابات میں بھی ٹرمپ اور بائیڈن کی کامیابی کے واضح امکانات ہیں۔
امریکہ کے صدر جو بائیڈن اور سابق صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے منگل کو پانچ ریاستوں میں ہونے والے پرائمری انتخابات میں سے چار میں کامیابی حاصل کر لی ہے۔
پانچ نومبر کو ہونے والے صدارتی انتخاب میں اب یہ دونوں رہنما مدِ مقابل ہوں گے۔
ٹرمپ نے فلوریڈا کا ری پبلکن پرائمری بھی جیت لیا جب کہ فلوریڈا میں ڈیموکریٹس کے 224 مندوبین نے بغیر کسی الیکشن کے بائیڈن کو ووٹ دینے کا اعلان کیا تھا۔
ماہرین کے مطابق صدارتی نامزدگی کی دوڑ کے علاوہ دیگر انتخابی معرکوں کے ذریعے قومی سیاسی موڈ کا جائزہ لیا جا سکتا ہے۔
ریاست اوہائیو میں ری پبلکن سینیٹ پرائمری میں ٹرمپ کے حمایت یافتہ تاجر برنی مورینو نے دو چیلنجرز کو شکست دی۔ ان میں اوہائیو کے سیکریٹری آف اسٹیٹ فرینک لاروز اور کلیولینڈ گارڈینز بیس بال ٹیم کے مالک خاندان سے تعلق رکھنے والے میٹ ڈولن شامل ہیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں